پیوٹن کا دو ملکی دورہ ایشیا،یوکرین میں روس کیلئے مکمل حمایت کا وعدہ

رپورٹ: فرحان حمید قیصر

شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ اُن نے یوکرین میں روس کی جنگ کے لیے مکمل حمایت اور یکجہتی کا وعدہ کیا ہے کیونکہ صدر ولادیمیر پیوٹن نے 24 برسوں میں منگل کے روز شمالی کوریا کا پہلا دورہ کیا اور کہا کہ دونوں ممالک امریکا اور اس کے اتحادیوں کی تسلط پسندانہ اور سامراجی پالیسی کا مقابلہ کر رہے  ہیں۔دونوں ممالک کے درمیان تعلقات اس وقت سے قریب تر ہو گئے ہیں جب ماسکو نے یوکرین پر مکمل حملے شروع کیے ہیں، اس تشویش کے درمیان کہ پیانگ یانگ روس کو روسی تکنیکی مہارت کے بدلے ہتھیار فراہم کر رہا ہے۔
روس اور شمالی کوریا نے ہتھیاروں کی منتقلی سے انکار کیا ہے لیکن فوجی تعلقات کو مضبوط کرنے کا وعدہ کیا ہے۔پیوٹن نے بدھ کے روز یوکرین پر غیر متزلزل حمایت پر کم کا شکریہ ادا کیا اور دونوں نے ایک نئے جامع اسٹریٹجک شراکت داری کے معاہدے کا اعلان کیا حالانکہ اس کے مندرجات کی کوئی تفصیلات جاری نہیں کی گئیں۔ اس ہفتے کے شروع میں کریملن نے کہا تھا کہ یہ معاہدہ 1961 2000 اور 2001 میں دستخط کیے گئے سابقہ دو طرفہ دستاویزات اور اعلانات کی جگہ لے گا۔ پیوٹن اور کم کی آخری ملاقات ستمبر 2023 میں مشرقی روس میں ہوئی تھی۔
کم نے پیوٹن کے ساتھ ملاقات کے بعد بات کرتے ہوئے کہا کہ نیا معاہدہ دفاعی نوعیت کا ہے اور اس میں باہمی تعاون کا وعدہ شامل ہے اگر کسی بھی طرف سے حملہ کیا گیا روسی خبر رساں ایجنسیوں کے مطابق روسی صدر نے کہا کہ یہ تعلقات کو نئی سطح پر لے جائے گا۔روسی صدر پیوٹن طلوع فجر سے قبل شمالی کوریا کے دارالحکومت میں ۔اترے اور شمالی کوریا کے رہنما کم جنگ ان صبح سویرے انکے استقبال کے لیے منتظر تھے۔آمد پر دونوں رہنماوں نے ہاتھ ملایا اور گلے لگایا جبکہ روایتی کوریائی ہین بوک میں ایک خاتون نے پیوٹن کو سرخ گلابوں کا گلدستہ پیش کیا۔
اس کے بعد کِم اپنی لیموزین میں پیوٹن کے ساتھ سفر ہر راونہ ہوئے اور دلکش مناظر سے لطف اندوز ہو رہے تھے سڑکیں روسی پرچموں اور روسی رہنما کے پورٹریٹ سے سجی ہوئیں تھیں انہوں نے ایک ساتھ موٹرسائیکل میں کمسوسن اسٹیٹ گیسٹ ہاؤس کا سفر کیا۔انہوں نے کم ال سنگ اسکوائر میں ایک سرکاری استقبالیہ تقریب میں شرکت کی، جس میں فوجیوں کی قطاریں توجہ کے لیے کھڑی تھیں اور اسکوائر میں بچوں کا ہجوم کھڑا تھا، جسے بینرز اور غباروں سے سجایا گیا تھا۔
قبل ازیں شمالی کوریا کی سرکاری خبر رساں ایجنسی کے سی این اے نے دونوں رہنماؤں کی ملاقات کو ایک تاریخی واقعہ قرار دیا تھا جس نے شمالی کوریا اور روس کے درمیان دوستی اور اتحاد کی "ناقابل تسخیر اور پائیداری” کو ظاہر کیا گیا تھا۔شمالی کوریا کی سرکاری خبر رساں ایجنسی نے مزید کہا کہ دونوں ممالک کے تعلقات بین الاقوامی انصاف، امن اور سلامتی کے تحفظ اور ایک نئی کثیر قطبی دنیا کی تعمیر کو تیز کرنے کے لیے ایک مضبوط اسٹریٹجک قلعہ کے طور پر ابھرے ہیں۔


شمالی کوریا کے دورے میں پیوٹن کے ساتھ کئی اعلیٰ حکام بھی شامل تھے جن میں وزیر دفاع آندرے بیلوسوف، وزیر خارجہ سرگئی لاوروف اور نائب وزیر اعظم ڈینس مانتوروف شامل تھے۔شمالی کوریا اپنے جوہری ہتھیاروں اور میزائل پروگراموں کی وجہ سے برسوں سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی سخت پابندیوں کا شکار ہے۔ روس یوکرین پر حملے پر امریکا اور اس کے اتحادیوں کی طرف سے پابندیوں کا بھی سامنا کر رہا ہے۔
چین کے ساتھ ساتھ شمالی کوریا کے اہم اتحادی روس نے شمالی کوریا کے ہتھیاروں کے تجربات اور سیٹلائٹ لانچوں پر اقوام متحدہ کی نئی پابندیاں لگانے کی امریکی قیادت کی کوششوں کو بارہا روکا ہے۔مارچ میں روس کے ایک ویٹو نے اقوام متحدہ کی پابندیوں کی نگرانی ختم کر دی جس کے نتیجے میں مغربی الزامات لگائے گئے کہ ماسکو جانچ پڑتال سے بچنے کی کوشش کر رہا ہے کیونکہ وہ یوکرین میں استعمال کے لیے پیانگ یانگ سے ہتھیار خریدتا ہے۔ امریکی اور جنوبی کوریا کے حکام نے کہا ہے کہ وہ پیانگ یانگ کی نگرانی کے لیے ایک نئے طریقہ کار کے لیے آپشنز پر بات کر رہے ہیں۔
واشنگٹن ڈی سی میں امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے کہا کہ پیوٹن کے شمالی کوریا کے دورے سے یہ واضح ہوتا ہے کہ روس نے کس طرح ترقی کرنے اور ان ممالک کے ساتھ تعلقات کو مضبوط کرنے کی مایوسی کی کوشش کی جو اسے وہ فراہم کر سکتے ہیں جو اسے یوکرین کے خلاف شروع کی گئی جارحیت کی جنگ جاری رکھنے کے لیے درکار ہے۔ شمالی کوریا یوکرین میں استعمال کے لیے روس کو اہم گولہ بارود اور دیگر ہتھیار فراہم کر رہا ہے۔ بلنکن نے منگل کو نیٹو کے سربراہ جینز اسٹولٹنبرگ کے ساتھ ملاقات کے بعد صحافیوں کو بتایا کہ ایران ڈرون سمیت ہتھیار فراہم کر رہا ہے، جو عام شہریوں اور شہری انفراسٹرکچر کے خلاف استعمال ہوتے ہیں۔ اسٹولٹن برگ نے ان خدشات کا اعادہ کیا کہ روس شمالی کوریا کو ان کے میزائل اور جوہری پروگراموں کی حمایت کرنے پر جو ممکنہ مدد فراہم کرتا ہے۔شمالی کوریا کے ہتھیاروں کے تجربات اور جنوبی کوریا میں بڑے پیمانے پر فوجی مشقوں کے درمیان حالیہ مہینوں میں جزیرہ نما کوریا میں کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔

دونوں ممالک کے درمیان 2018 کا فوجی معاہدہ گزشتہ سال ٹوٹ گیا اور پیانگ یانگ سرحد پر اپنے دفاع کو مضبوط بنا رہا ہے۔جنوبی کوریا نے منگل کے روز کہا کہ اس کی افواج کو انتباہی گولیاں چلانی پڑیں جب شمالی کوریا کے فوجی بارودی سرنگیں بچھانے اور دیگر سرگرمیوں میں ملوث تھے، جو بظاہر غلطی سے سرحد پار کر گئے۔ ایسا ہی ایک واقعہ 9 جون کو پیش آیا۔


روسی صدر پیوٹن بدھ کی رات ویتنام کے شہر ہووئی پہنچے، جہاں امریکا کی جانب سے روسی رہنما کی میزبانی پرشدید مذمت کے باوجود ان کا پرتپاک استقبال کیا گیا
روسی صدر کا طیارہ ہنوئی کے ہوائی اڈے پر اترا جہاں ویتنام کے نائب وزیر اعظم ٹران ہونگ ہا اور پارٹی کے اعلیٰ سفارت کار لی ہوائی ٹرنگ نے سرخ قالین پر ان سے ملاقات کی۔روسی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق پیوٹن تجارتی اور اقتصادی، سائنسی تکنیکی اور انسانی ہمدردی کے شعبوں میں تعاون کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی اور علاقائی ایجنڈے کے اہم امور پر تبادلہ خیال کرنے کے لیے تیار ہیں۔

روس ہنوئی کا دیرینہ دوست ہے اور جہاں بہت سے لوگوں کو وہ حمایت یاد ہے جو سوویت یونین نے فرانس اور امریکا کے خلاف پچھلی جنگوں میں ویتنام کو دی تھی۔ سابق سوویت یونین ان اولین ممالک میں سے ایک تھا جس نے ہو چی منہ کی ویتنامی حکومت کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کیے تھے۔

Comments are closed.